About

                       

دارالشعور1990کو لاہور میں قائم ہوا،اس سے تاریخ،سیاست،حالات حاضرہ ،ادب،صحت،اسلامیات،اخلاقیات اور سیلف ہیلپ کے موضوعات پربے شمار کتب  شائع ہوچکی ہیں۔

    دار الشعور کی ہمیشہ یہ کوشش رہی ہے کہ وہ ان موضوعات پر عام روایتی نقطہ نظر کے بجائے ایک منفرد خیال پیش کرے جس سے لوگ اپنے خیالات میں ایک واضح تبدیلی اور خوشگوار احساس کو محسوس کریں۔ہماری مطبوعات کے مصنفین میں قومی اور بین الاقوامی سطح کے اہل علم اور دانشور شامل ہیں۔ہماری یہ بھر پور کوشش رہی ہے کہ ہم نایاب اور جدید موضوعات پر کتب کی نشرواشاعت کے ساتھ ساتھ ان موضوعات پرطبع شدہ کتب تک اپنے قارئین کی رسائی کو ممکن بنائیں۔
    ہم نے طبع زاد مطبوعات کے ساتھ ساتھ مختلف موضوعات پربین الاقوامی مطبوعات کے تراجم کو خصوصی اہمیت دی ہے تاکہ بین الاقوامی سطح پر ہونے والی علمی وتحقیقی روایت کے ساتھ ہمارا قاری ربط پیدا کرسکے ۔ہمیں یہ اعزاز حاصل ہے کہ ہم نے برعظیم ہندوپاک کے ایک قدیم اور اولین ادارے ”جامعہ عثمانیہ حیدر آباد دکن“کے بعد سب سے زیادہ تراجم پیش کئے ہیں۔
    اردو ادب میں کلاسیکی ادب کے فروغ کے ساتھ ساتھ اس نئے پہلوؤں کی دریافت اور نئے ابھرنے والے ادبائ،شعراءاور دانشوروں کی حوصلہ افزائی خصوصی طور پر ہمارے پیش نظر ہے تاکہ ہم اپنی قومی زبان کے فروغ اور ارتقاءمیں اپنا کردار ادا کرسکیں۔

 دارالشعور کے بنیادی مقاصد میں اہم ترین مقصد سماجی ترقی،نظریاتی وضاحت،تاریخی شعور ، معاشرے میں بھائی چارے اور تعاون کی فضاءپیدا کرنا ہے۔یہ اعلیٰ مقاصد افراد کی ذہنی سطح اور عملی محارتوں کو بلند کئے بغیر ممکن نہیں ہیں۔اس کے لئے ادارے نے ”اپنی مدد آپ“ ”Self-Help “ پر مشتمل کتابیںشائع کرنا شروع کیا ہے۔جس میں قومی اوربین الاقوامی سطح کے مصنفین کی کتابیں اردو میں ترجمہ کروائی جاتی ہیں۔کتابوں کی سلیکشن کے لئے اس شعبہ کے ماہرین کا ایک اعلیٰ سطحی مشاورتی بورڈ فیصلہ کرتا ہے کہ کون سی مطبوعات ہمارے قومی اقدار ،کلچراور فضاءسے ہم آہنگ ہیں اور لوگوں کی مشکلات کوحل کرنے میںمدد فراہم کرتی اوران کی فہم و بصیرت اور (سکلز) کو بڑھاتی ہیں،آئیے! اس مقصد میں آپ بھی ہمارا ساتھ دیجئے!
    دارالشعورآگہی اور شعور کے ترویج کی ایک تحریک ہے اور وہ انسانی فلاح اور ترقی کے لئے ہر باصلاحیت فرد کو اس کام میں شامل سمجھتی ہے۔