پھر وه مجھے کبھی ضائع نهیں کرے گا ۔۔۔ فاطمہ اربیہ

وه اپنی بیوی اور شیرخوار بچے کو اپنے پیچھے چلنے کا حکم دیتے هوۓ آگے بڑھنے لگے …بیوی اپنے حاکم کا حکم مانتے
هوۓ ان کے پیچھے هولی ….وه اپنی بیوی کو ایسی جگه لے گۓ جہاں دورد دور تک کوئی شخص نظر نه آرها تھا …پانی کا نام
و نشان نه تھا …هر طرف گرمی کی تپش سے اولے پڑ رهے تھے …. نه کوئی پرند چرند ..نه هی کچھ کھانے کا وهاں بندوبست
کیا جاسکتا تھا …بیوی بنا کچھ بولے اپنے خاوند کے حکم په چلتی جارهی تھی …کیونکه اسے اپنے خاوند په اعتماد تھا ….وه
ایک جگه رکے …اور پھر بیوی اور شیر خواربچے کی پروا کیے بنا ان کو وهاں هی رهنے کا حکم دیا اور خود واپسی کی راه
پکڑ لی …نه کوئی احساس نه کوئی فکر …یوں هی بنا کچھ کھانے پینے کے دیے چلے گۓ اور پیچھے مڑ کر دیکھنا بھی گوارا
نه سمجھا …….بیوی یه دیکھ کر بہت حیران هورهی تھی …که میرا اتنا پارسا خاوند ایسے کیسے کرسکتا هے …اور آوازیں
دینے لگی ……ابراهیم ….ابراهیم …..ابراهیم …..همیں اکیلے چھوڑ کر کہاں جارهےهیں…هاں یه واقعه پیغمبر ابراهیم اور ان
کی بیوی ساره کا هے …..
پیغمبر ابراهیم نے درد بھری صداؤوں کا جواب دینا بھی مناسب نه سمجھا اور مڑ کر پیچھے نهیں دیکھا ….باربار پکارنے کے
باوجود جب اماں ساره کو کوئی جواب نه ملا تو وه سوچنے لگی که میرا خاوند اور خدا کا رسول کبھی اتنا سخت دل نهیں هوسکتا
…اور آخر پکار اٹھی ….اے الله کے رسول کیا یه مالک کا حکم هے  ابراهیم پیغمبر نے بس اتنا جواب دیا .هاں یه مالک کا حکم
هے…………..اتنا سننا تھا که اماں جی پر سکون هوگئ اور فرمانے لگی ……
پھر وه مجھے ضائع نهیں کرے گا 
الله اکبر !!!! کیسا ایمان تھا ان کا ….اتنی بڑی آزمائش نه کھانے کا سوچا نه گرمی کی تپش کا…..رب العالمین کا فیصله سمجھ کر
خنده پیشانی سے قبول کرلیا …مالک په اتنا توکل …حد درجه کا یقین …

کیا هماراتوکل بھی ایسا هے کہ ہم نیک کاموں میں بھی قدم اٹھانے سے پهلے یه سوچتے هیں که کهیں هم کچھ کھو نه دیں
….همارا توکل اتنا کم هے هم نے کبھی یه سوچا نهیں که اے دل تو رب کی رضا کی خاطر سفر میں هے پھر تو کیوں ڈر رها
هے جس رب نے اماں ساره کو آج سے هزاروں سال پھلے ضائع نهیں هونے دیا وهی رب تمهیں اکیلا نهیں چھوڑے گا …..جو
شخص الله کے حکم کو مانتا هے …بظاهر اسےلگتا هے که وه کھو رهاهے لیکن حقیقت میں وه پا رها هوتاهے …هم اپنی زندگی
میں اکثر اوقات نیک اعمال کرنا چاهتے هیں ..لیکن دنیاوی سوچ همیں آگے نهیں بڑھنے دیتی ….کهیں همیں اپنی جاب نه
چھوڑنی پڑ جاۓ …کهیں میرا یه عمل مجھے اپنوں سے دور نه کردے ….کهیں میری عزت میں فرق نه آجاۓ ….میرا سٹیس
خراب نه هوجاۓ …ایسی سوچیں همیں هر طرف سے جھکڑے هوۓ هیں ….جتنا بھی سخت حکم هو اگر وه رب لعالمین کا هے
تو اسے مضبوطی سے کرنا شروع کر دو….وه همارے اعمال کو درخت بنا دیتا هے …….
.چلو نکل پڑتے هیں راه خدا په …….یه سوچتے هوۓ که.
پھر وه مجھے ضائع نهیں کرے گا ;

Leave Comments

آج کی بات

انسان حالات کی پیداوار نہیں،حالات انسان کی پیداوارہوتے ہیں۔
{کتاب۔کوئی کام نا ممکن نہیں۔سے اقتباس}